سوال جلد ی ارسال کریں
اپ ڈیٹ کریں: 2019/9/19 زندگی نامہ کتابیں مقالات تصویریں دروس تقریر سوالات خبریں ہم سے رابطہ
زبان کا انتخاب
همارے ساتھ رهیں...
فهرست کتاب‌‌ لیست کتاب‌ها

قصیدہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ معجز جلالپوری

قصیدہ

درمدح خاتون محشر سلام اللہ علیہا

شاعراہل بیتؑ: جناب معجز جلالپوری(فیض آباد۔ہند)

ہوئی ظاہر حقیقت دل کی میرے دیدہ تر سے      بجائے اشک جب دامن پہ قطرات گہر برسے

نگاہیں ہوخوشی سے مڑ گئیں کس کے تصورسے     وہ مجھ کو دولت غم مل گئی  دنیا جسے ترسے

ہوائے ظلم کیا گل کرسکے شمع وفامیری            وفا کانام جب روشن ہوا ہے ایک دلاور سے

ازل ہی سے چلی آئی ہے چشمک نور وظلمت کی     اندھیرا کیسے بڑھ سکتاہے لیکن ماہ واخترسے

جلاکر برق میرا آشیانہ ہوتی ہے حیراں             سنور جاتاہے پھر میرانشیمن ایک نئے سرسے

کشاکش زندگی کی کوئی لمحہ کم نہیں ہوتی           جدا ہوکر تڑپتاہے ہر ایک قطرہ سمندر سے

ستاتی ہی رہیگی  مجھکو یوں ہی گردش دوراں     کسی کے در پہ سر رکھکر میں اب کھیلوں مقدرسے

بھروں دامن ثنائے فاطمہ ؑ کے لعل وگوہر سے      مراذہن رسا اے کاش چھوجائے جو چادر سے

شعاع مہر لرزاں ،ماہ واختر ہوگئے پنہاں            کرن ایماں کی پھوٹی خانہ محبوب داور سے

فضانوری، ہوا نوری، زمین سے تا سمانوری          "ہوا روشن زمانہ آمد خاتون محشر سے"

قدم خاتون  جنت کے جو آئے   باغ ایمان میں    ہمیں خوشبوئے جنت آرہی ہے ہر گل ترسے

تری چادر کو چھوکر یوں ہوالیتی ہے انگڑائی        کوئی سوکر اٹھا جیسے ابھی پھولوں کے بستر سے

لٹائی جارہی ہے دولت ایماں اسی در سے          نہ باور اگر پوچھو اسے سلمان وبوذر سے

رضائے حق پہ راضی کسطرح رہتے ہیں عالم میں  زمانے نے سبق سیکھا ہے یہ زہراء ؑ ترے گھرسے

زمیں پہ کیا سخاوت کا ہوا  جب عرش پہ چرچا     ملک بھی روٹیاں لےلے گئے آکر ترے در سے

کبھی کھاناکبھی کپڑا ۔کبھی تارا اترتا ہے            ہمیشہ کھیلتی رہتی تھیں یہ مرضی داور سے

کوئی سمجھے نہ اس کو انتہائے الفت زہراءؑ          کہ خود تعظیم کواٹھتے ہیں کیوں پوچھو پیمبرؐ سے

کوئی تحت کساجزء فاطمہ زہراؑ نہیں آیا             تقابل کرتے ہیں ناداں ازواج پیمبرؐسے

علیؑ کا مرتبہ بعد نبی ؐ تسلیم ہے لیکن             نہیں رتبہ میں کم ہیں فاطمہ زہراؑ بھی حیدرؑسے

مسیحابن گئیں جب فخرمریم بزم شادی میں      عجب کیارہ گئےہوں چرخ پہ عیسی بھی ششدرسے

کرنیکی حشرمیں آکر شفاعت فاطمہ زہراءؑ        مگر انسان کو لازم ہے کہ وہ بچتارہے شرسے

بھروسہ ہے مجھے ان آنسوؤں کے چند قطروں سے   خرید وں گامیں  جنت دیکھنا بنت پیمبرؐسے

نہ گھبرائیں محب فاطمہؑ گرمی محشر سے             دئے جائیں گے چھینٹے رخپہ انکےآب کوثر سے

یکایک سرپہ معجز انکی چادر کا ہو اسایہ

میں گھبرایا ہوا تھا حشر کے پرہول منظر سے

           السلام علیک یا فاطمہ الزہراء بنت رسول اللہﷺ     

وعلیٰ بعلک امیرالمومنین واولاد ک الطاہرین"