سوال جلد ی ارسال کریں
اپ ڈیٹ کریں: 2019/9/19 زندگی نامہ کتابیں مقالات تصویریں دروس تقریر سوالات خبریں ہم سے رابطہ
زبان کا انتخاب
همارے ساتھ رهیں...
فهرست کتاب‌‌ لیست کتاب‌ها

استغاثہ علامہ جوادی کلیم

استغاثہ

از: علامہ جوادی کلیم الہ آبادی

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

عجل علیٰ ظہورک یاوارث الدیار

گلشن ترے فراق میں ہے ایسا سوگوار      سبزہ کے سرپرخاک ہے شبنم ہے اشکبار

صدیاں ہوئیں چمن سے گزرتی نہیں بہار      اب ہے بہار کاگل نرجس پہ انحصار

آجاکہ ہے زمانہ کوبس تیرا انتظار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

  ہر لمحہ کیوں نہ ہو دل مومن میں اضطراب       پھرمائل زوال ہے مشرق کاآفتاب

  چھایاہوا فضاپہ ہے الحاد کا سحاب                 خطرہ میں  پڑگیاہے شریعت کاانقلاب

اٹھی نہ اب تواٹھے گی کب تیری ذوالفقار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

کس سے کہیں جو ظلم جہاں میں ہے کوبہ کو  بہتاہے خون کشتہ اسلام جوبہ جو

اشکوں کے بدلے آنکھ سے بہنے لگالہو             یثرب کی ہر گلی میں چراغاں ہے چار سو

اوربے چراغ ہیں تیرے اجداد کے مزار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

بدلاکچھ ایسانقشہ دنیائے ہست وبود          ارض حرم سے مٹتاہے ایمان کاوجود

اصنام بن کے بیٹھی ہے زریت سعود   نظریں لگائے بیٹھے ہیں یثرب پہ پھریہود 

تیرے سوا نہیں کوئی حیدر کاورثہ دار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

مولا بڑی طویل ہے یہ داستان غم                 ہرسال ہم پہ ہونے لگا ایک نیا ستم

سایہ میں جسکے لیتے تھے اہل یقین دم       ہے ظالموں کوضدکہ نہ اٹھے گاوہ علم

آوگے تم توان پہ پڑے گی خداکی مار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

آمادہ فساد ہیں ہرسمت کینہ ور                    آتی نہیں کہیں سے سکوں کی کوئی خبر

بدلے کچھ اسطرح سے سب انداز خیروشر           کافر ہمیں بناتے ہیں نسلوں کے بدگہر

آل سعود بن گئی مذھب کی ٹھیکے دار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

ملت کے اعتبار کا نقشہ بدل گیا                   ہر شخص حددین خدا سے نکل گیا

شیطاں کاسحر فکرمسلماں پہ چل گیا               شور عمل تو رہ گیا زور عمل گیا

بے روح ہوکے رہ گئی اسلام کی پکار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

امت میں اب رسولؐ کایہ احترام ہے               بوسہ بھی قبر پاک نبیؐ کاحرام ہے

فتوائے کفر وشرک کا اسلام نام ہے                جرم عظیم قبر نبیؐ پر سلام ہے

جلاد عصر بن گیا ہر خادم مزار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

اب تو طواف خانہ حق بھی ہے مرحلہ              خدمت سے پہلے مانگتے ہیں اجربے حیا

قبل از منیٰ ہی کٹتاہے حجاج کاگلا                  ہرہرقدم پہ لوٹ ہے ہرگام پہ سزا

ہوتی ہے نام خدمت کعبہ پہ لوٹ مار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

مولا الٹ  دو چہرہ انور سے اب نقاب               کب تک رہے گا مہر امامت پس حجاب

مشتاق ہے کلیم کہ دیکھے وہ انقلاب                نکلے دوبارہ ڈوب کے مغرب سے آفتاب

اس بات کاہے وارث حیدر پہ انحصار

عجل علیٰ ظہورک یاصاحب الوقار

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عن الامام موسیٰ ابن جعفرعلیہ السلام:

"عونک للضعیف من افضل الصدقۃ" (تحف العقول: ص 309)