سوال جلد ی ارسال کریں
اپ ڈیٹ کریں: 2019/11/13 زندگی نامہ کتابیں مقالات تصویریں دروس تقریر سوالات خبریں ہم سے رابطہ
زبان کا انتخاب
همارے ساتھ رهیں...
فهرست کتاب‌‌ لیست کتاب‌ها

قصیدہ سید العلماء

قصیدہ

نتیجہ فکر: عالم لکھنوی

(علامہ علی نقی النقوی طاب ثراہ)

ساقیہ وہ مے پلا جو ہو چمن آرائے دیں             جس میں عصیان ونفاق وکفر کی بو بھی نہیں

جو رسول اللہؐ نے مسجد میں پلائی وہ شراب     جس کا مئے خانہ بناتھا بیت العالمین

نو رپھیلے نیر ایمان کو قلب صاف میں            داغ دل بن جائے جس سے روکش مہر ومہیں

بھر دے میرے دل کو دریائے مئے گلفام سے     موج کی صورت دکھائے دود آہ آتشیں

پنجئے خورشید میں ہے روئے زیبائے سہیل          حسن دست خوشنما سے ہوگیا ساغر حسیں

دیکھ کر باغ سخن کو لوگ رندوں سے کہیں           ہذا الجنات طبتم فادخلوھا خالدین

وصف شہ میں نغمہ زن یوں ہوں کہ میرے سامنے    بلبل سدرہ بھی آب شرم سے ہو ترجبیں

روز رجعت پڑگیا تھا عارض انور کاعکس              پھر نہ کیوں ہوتامنور چہرہ مہر مبین

جب تھے دنیا میں گئے افلاک پر مثل نبیؐ             روح پہنچی پیش حق جب خود گئے زیر زمین

لائے روز وشب علو مرتبت پر دو گواہ               گھر پہ تارے کااترنا رجعت مہر مبین

صورت  انکی عالم بالا کے ہی پیش نظر             ٹھہرے اب افضل یہی یا عیسیٰ گردوں نشیں

تھاپئے موسیٰ ؑ ید بیضا تویہ بھی کم نہ تھے             تھا نشان سجدہ مثل مہر بالائے جبیں

بات کرتاتھا خدا موسیٰ ؑ سے کوہ طور پر کو           کون تھا لیکن زبان پاک رب العالمین

ہر رگ وپے میں مرے حب علیؑ ہے جوش زن       دل پہ یاحیدرؑ قم صورت نقش نگیں

روح کھینچ کر آگئی سر میں وفور شوق سے             آگئے حضرت جو سرہانے بوقت واپسین

تم کہاں عالم یہ رتبہ مدح حیدرؑ کا کہاں     مل گئے تمکو مقدر سے یہ کچھ درثمیں 

قال امام الرضاؑ:

"صدیق کل امرء عقلہ وعدوہ جھلہ"ہرشخص کا دوست اس کی عقل اوراس کی جہالت ہے۔(تحف العقول/330)

قال رسول اللهﷺ:

"انما مَثَلُ اهل بیتی کسفینة نوح من رکبها نجا و من تخلّف عنهاغرق"

(مستدرک الحاکم،2/343)