سوال جلد ی ارسال کریں
اپ ڈیٹ کریں: 2024/6/13 زندگی نامہ کتابیں مقالات تصویریں دروس تقریر سوالات خبریں ہم سے رابطہ
زبان کا انتخاب
همارے ساتھ رهیں...
آخری خبریں اتفاقی خبریں زیادہ دیکھی جانے والی خبریں
  • 7ذی الحجہ(1445ھ)شہادت امام محمد باقر علیہ السلام کےموقع پر
  • 29ذیقعدہ(1445ھ)شہادت امام محمد تقی علیہ السلام کےموقع پر
  • یکم ذیقعدہ(1445ھ)ولادت حضرت معصومہ(س)کےموقع پر
  • 25شوال(1445ھ)شہادت امام جعفر صادق (ع) کے موقع پر
  • 15 شعبان(1445ھ)منجی عالم حضرت بقیہ اللہ (عج) کی ولادت کے موقع پر
  • اعیاد شعبانیہ (1445ھ)تین انوار ھدایت کی ولادت باسعادت کے موقع پر
  • 25رجب (1445ھ)حضرت امام کاظم علیہ السلام کی شہادت کے موقع پر
  • 13رجب (1445ھ)حضرت امام علی علیہ السلام کی ولادت کے موقع پر
  • 20جمادی الثانی(1445ھ)حضرت فاطمہ زہرا کی ولادت کے موقع پر
  • 13جمادی الثانی(1445ھ) حضرت ام البنین کی وفات کے موقع پر
  • 17ربیع الاول(1445ھ)میلاد باسعادت صادقین( ع) کے موقع پر
  • رحلت رسولخدا، شہادت امام حسن مجتبیٰ ؑاور امام رضا ؑکے موقع پر
  • 20صفر (1445ہجری) چہلم امام حسین علیہ السلام کے موقع پر
  • 10محرم (1445ھ)امام حسین( ع)اور آپکے با وفا اصحاب کی شہادت
  • مرحوم آیت اللہ سید عادل علوی (قدس سرہ) کی دوسری برسی کے موقع پر
  • 18ذی الحجہ(1444ھ) عید غدیرخم روز اکمال دین اوراتمام نعمت
  • 15ذی الحجہ(1444ھ)ولادت امام علی النقی علیہ السلام کےموقع پر
  • 7ذی الحجہ(1444ھ)شہادت امام باقر علیہ السلام کےموقع پر
  • 15شعبان المعظم(1444ھ)ولادت امام مہدی (عج) کےموقع پر
  • 10 رجب (1444ھ)ولادت باسعادت امام محمدتقی علیہ السلام کےموقع پر
  • آخری خبریں

    اتفاقی خبریں

    زیادہ دیکھی جانے والی خبریں

    15شعبان المعظم(1441ھ)ولادت امام مہدی(عجل اللہ فرجہ)کےموقع پر

     ولادت باسعادتامام مہدی علیہ السلام

    بارہویں امام معصوم حضرت حجت بن الحسن المہد ی ، امام زمانہ (عجل اللہ تعالی فرجہ) نیمہ شعبان، ٢٥٥ ہجری ، شہر سامراء میں متولد ہوئےآپ کے والد کا نام امام حسن عسکری  علیہ السلام اور والدہ کا نام نرجس ہے امام مہدی (عج) کے لئے بہت سے اسماء، القاب اور کنیات منقول ہیں ان میں سب سے زیادہ مشہور لقب  "مہدی"ہے ۔

    غَیبت صغریٰ

    غیبت صغری کا سلسلہ تقریباً ستر برس تک جاری رہا جس میں آپؑ اپنے معین کردہ نائبین کے ذریعے اسلام کی خدمت ، لوگوں کی ہدایت اور انکے مسائل کےحل کا فریضہ انجام دیتے رہے ۔ اس دور میں آپؑ کے نائب اوّل حضرت عثمانؓ بن سعید عمری ، دوئم حضرت حسین بن روحؓ، سوئم حضرت علی بن محمّد السمری تھے ۔ امامؑ کے حکم سے مذکورہ نوابین کے علاوہ چند مخصوص سعید و مبارک شخصیات بھی ہین جومذکورہ نوابین سے حاصل شدہ امام کے احکامات لوگوں تک پہنچانے کی خدمت پر معمور تھے ۔ ان میں بغداد سے حاجز، بلالی، عطاّر ۔ کوفہ سے عاصمی ۔ اہواز سے محمّد بن ابراہیم ۔ ہمدان سے محمّد بن صالح ۔ رَے سے بسامی واسدی ۔ آذربائیجان سے قسم بن علاء ۔ نیشاپور سے محمّد بن شاذان شامل ہیں ۔

    غَیبت کبریٰ

    غَیبت صغریٰ میں آپؑ کے آخری نائب جناب علی بن محمّد السمری تھے ، اسکی وجہ یہ ہے کہ جب علی بن محمّد کا وقت رحلت نزدیک ہوا تو انہیں امامؑ کا ایک رقعہ ملا جس میں تحریر تھا کہ" اے علی بن محمّد خدا وند عالم تمہارے بارے میں تمہا رے بھائیوں اور دوستوں کو اجر جمیل عطاء کرے، تمہیں معلوم ہو کہ تم چھ روز میں وفات پانے والے ہو،تم اپنے انتظامات کر لو اور آئندہ کے لئے اپنا کوئی قائم مقام تجویز و تلاش نہ کرو۔ اس لئے کہ غَیبت کبریٰ واقع ہو گئی ہے اور اذن خدا کے بغیر ظہور نا ممکن ہو گا ۔ یہ ظہور بہت طویل عرصے کے بعد ہو گا ۔ چنانچہ ایسا ہی ہؤا،چھ روز بعد علی بن محمّد 15شعبان 329 ہجری کو انتقال فرما گئے اور بحکم خدا امامؑ کی غَیبت کبریٰ کا آغاز ہو گیا ۔

    علاماتِ ظہور

     آپؑ کے ظہور کی بیشمار و لاتعداد علامات ہیں جنہیں ان محدود صفحات میں ضبط تحریر میں لانا ممکن نہیں کچھ واقعات رونما ہو چکے ہیں، کچھ ہو رہے ہیں اور بہت سے ابھی ہونا باقی ہیں ۔ اسی لئے موجودہ دور کو قربِ قیامت اور فتنہ کے دور سے تشبیح دی جا تی ہے۔

     لہٰذا ذیل میں نہایت اختصار کے ساتھ ہم وہ چند علامات پیش کر رہے ہیں جو ابتک ظاہر ہو چکی ہیں ۔

    ·        دین کو دنیا کے عوض فروخت کیا جائے گا ۔

    ·        سود کا زور ہو گا ۰رشوت عام ہو گی۔

    ·        بادشاہ و امراء فاسق و فاجر ہوں گے ۔

    ·        مسجدیں آباد مگر ہدایت سے خالی ہوں گی ۔

    ·        حرمین شریفین میں ایسے عمل ہونگے جو منشائے خدا وندی کے خلاف ہونگے ۔

    ·        لوگ آلاتِ غناء(موسیقی) جیب میں رکھ کر گھوما کریں گے۔

    ·        بیت اللہ معطل کر دیا جائے گا ۔

    ·        عورتیں مردوں کے مشابہ ہونگی ۔

    ظہور امام مہدیؑ

    رسول خداﷺ کا ارشاد گرامی ہے "امام مہدیؑ قریہِ(کرعہ) جو مدینہ سے تیس میل کے فاصلے پر ہے سے برآمد ہوکر مکہّ معظمہ سے ظہور کریں گے ۔ روایات میں ملتا ہے کہ آپؑ بروز جمعۃالمبارک، روزعاشور کعبہ پر ظہور فرمائیں گے اور دین اسلام کو اسکی اصل روح کے مطابق پوری دنیا پر رائیج کر کے خلق خدا کو عدل و انصاف سے بہرہ مند فرمائیں گے۔

    خدا ہمیں ہدایت اور وہ توفیقات عطاء فرمائے کہ ہم امام علیہ اسلام کے اعوان و انصار میں شامل ہو سکیں۔ آمین